Efficient Use Of Fuel As Received From Engineer Friends

فزکس کے اصولوں پہ کام کرتے ہیں اور اس سے آپ کے پٹرول کا خرچ دس سے پندرہ فیصد کم ہو سکتا ہے. انڈسٹری میں بارہ سال کا تجربہ رکھنے پر مجھے یہ باتیں سمجھ آئی ہیں جہاں روزانہ 26ہزار لیٹر تیل استعمال ہوتا ہے آپ نے چار پانچ باتوں کا خیال رکھنا ہے اور یقین کیجئے حالیہ پٹرول قیمتیں بڑھنے سے آپ کو زیادہ فرق نہیں پڑے گا.

Work on the principles of physics and this can reduce your gasoline consumption by ten to fifteen percent. Having twelve years of experience in the industry, I have come to understand that where 26,000 liters of oil is used daily, you have to take care of four or five things and rest assured that the recent increase in petrol prices will not make much difference to you.

پہلا کام
گاڑی کا پٹرول صبح چھ سے اٹھ بجے کے بیچ میں فُل کروائیں. تمام پٹرول پمپ کا ٹینک انڈر گراؤنڈ ہوتا ہے اور صبح کے وقت دن کے مقابلے میں درجہ حرارت چھ سے دس ڈگری کم ہوتا ہے. اگر آپ شام کو پٹرول فل کروائیں اور اگلی صبح چیک کریں تو ٹمپریچر گرنے کی وجہ سے پٹرول سکڑ کر کم ہو جاتا ہے. یہ ڈنسٹی کی وجہ سے ہوتا ہے. دس ڈگری پہ ایک لیٹر 843گرام ہوتے ہیں جبکہ تیس ڈگری پر وہی ایک لیٹر پٹرول وزن کم کر کے 829 گرام رہ جاتا ہے. تو شام کے وقت پٹرول بھروانے والے صبح والوں کے مقابلے صرف ٪98 پٹرول لے پاتے ہیں. موجودہ ریٹ کے مطابق دیکھا جائے تو صبح پٹرول لینے والے شام والوں کی نسبت چار روپے فی لیٹر سستا پٹرول خرید رہے ہوتے ہیں.

Get your car refuelled between six and eight o’clock in the morning. All petrol pump tanks are underground and in the morning the temperature is six to ten degrees lower than during the day. If you refuel in the evening and check the next morning, the temperature drops and the petrol shrinks. This is due to density. At ten degrees a liter weighs 843 grams whereas at thirty degrees the same one liter of petrol reduces the weight to 829 grams. So those who fill up in the evening can get only 98% more petrol than those who fill up in the morning. According to the current rate, those who buy petrol in the morning are buying petrol at Rs 4 per liter cheaper than those who buy it in the evening.

دوسرا کام
گاڑی کا ٹینک کبھی خالی نہ ہونے دیں. آدھا خالی ہونے پر فوراً فل کروائیں. پٹرول ہوا کے ساتھ بہت تیزی سے ملتا ہے اسے ڈیفیوژن پروسس کہتے ہیں. فیول ٹینک میں جتنی کم ہوا ہو گی اتنا ہی کم پٹرول ہوا میں ضائع ہو گا.. بھرا ہوا ٹینک بہت کم ڈیفیوژن رکھتا ہے. اس کے برعکس ٹینک عموماً آدھے سے کم رکھنے والوں کا فیول زیادہ ڈیفیوز ہوتا ہے. ایک فیصد پٹرول کا گھاٹا دو روپے فی لیٹر پڑتا ہے اسے بچایا جا سکتا ہے. انڈسٹریل ٹینکس میں تیل پر تیرتی ہوئی چھت ہوتی ہے جو ہوا اور تیل کا آپسی ربط کم سے کم رکھتی ہے.

Never leave the car tank empty. Fill immediately when half empty. Gasoline mixes very quickly with air. This is called diffusion process. The less air in the fuel tank, the less gasoline will be lost in the air. A full tank has very little diffusion. In contrast, those with less than half the tank usually have more diffuse fuel. A loss of one per cent of petrol costs two rupees per liter. It can be saved. Industrial tanks have an oil-floating roof that minimizes the interaction between air and oil.

تیسرا کام
پٹرول ڈلوانے والے لیور ہینڈل پہ تین طرح کی سپیڈ ہوتی ہے. ہمیشہ پمپ پر لیور ہینڈل کو سب سے سست رفتار پر رکھنے کی تاکید کریں.. تیز رفتاری سے بھروانے کے دو نقصان ہوتے ہیں. پٹرول لائن کے اندر تیز رفتاری سے بخارات جو پمپ کے مین ٹینک میں واپس جاتے ہیں مگر اس سے میٹر بیک نہیں ہوتا. دوسرا نقصان یہ کہ تیزی سے لیکویڈ گزرنے سے پمپ کی کیلیبریشن میں عموماً فرق آتا ہے. یہاں لوکل پمپس کی منٹیننس پر زیادہ بھروسہ نہیں کرنا چاہئے. سلو سپیڈ سے ایک سے ڈیڑھ فیصد پٹرول بچایا جا سکتا ہے.

There are three types of speeds on the gasoline lever handle. Always insist on keeping the lever handle on the pump at the slowest speed. There are two disadvantages to fast filling. High-speed vapors inside the gasoline line that return to the main tank of the pump but do not back up. Another disadvantage is that rapid calibration of the pump usually makes a difference in the calibration of the liquid. Maintenance of local pumps should not be overly relied upon here. One to one and a half percent petrol can be saved from slow speed.

چوتھا کام
ہر بار ٹینک فل کرنے پر گاڑی کے سپیڈ میٹر میں نصب ڈسٹنس میٹر کو زیرو کر دیا کریں. اور اگلی بار فیول ڈلوانے پر لیٹر اور کلومیٹر کو کیلکولیٹ کریں. اپنی گاڑی کی ایوریج بہتر بنانے کے لئے انجن نوزل اور انجن آئل کے ساتھ ساتھ چلانے کے طریقے پر دھیان دیں. مائلیج بہتر ہونے سے پٹرول چار سے دس فیصد تک بچایا جا سکتا ہے.

Zero the distance meter installed in the vehicle speed meter every time the tank is filled. And next time you refuel, calculate litres and kilometres. Focus on the engine nozzle and engine oil as well as how to drive to improve your vehicle’s average. Improving mileage can save up to 4% on petrol.

یہ تمام طریقے ہر کنزویم ایبل لیکوئیڈ کے لئے استعمال کئے جا سکتے ہیں. تمام کیمیکلز اور ڈائیز قریب قریب یہی پراپرٹیز ہوتی ہیں. گوگل سے کروڈ آئل کا ریٹ لیتے رہا کریں. جب تک یہ 90ڈالر فی بیرل سے نیچے نہیں جاتا زندگی عذاب رہے گی. تب تک احتیاط کر لیں. تیل بچانے کی عادت بنا لیں کیونکہ یہ تیل ہزاروں صدیوں قبل کے جانداروں کی لاش کا صدقہ ہیں.

All of these methods can be used for every consumable liquid. All chemicals and dyes have almost the same properties. Keep getting crude oil rate from Google. Life goes on until it goes below 90 90 a barrel. Until then, be careful. Make it a habit to save oil because these oils are a charity for the corpses of living beings thousands of years ago.

You may also like...

Leave a Reply

Your email address will not be published.

%d bloggers like this: